تیرگی ہستی اوقات پہ بھاری گزری

تیرگی ہستی اوقات پہ بھاری گزری
میرے اُفتادہ خیالات پہ بھاری گزری
………………
عمر گزری ہَے صحرا میں دشت زاروں میں
گھڑی یہ ہر طرح حیات پہ بھاری گزری
………………
دورتک راہ میں پھیلا ہوا سمندر تھا
ہر خوشی درد کی ہر رات پہ بھاری گزری
………………
ایک آنسو کی طرح میں تیری آنکھوں سے گِرا
ٹیس پل بھر کی میری ذات پہ بھاری گزری
………………
اے جاویدتوڑ بھی دے اُنکی آرزو کا جنوں
نفرتِ یار تو جذبات پہ بھاری گزری

اپنا تبصرہ بھیجیں